کراچی میں جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ کا احتجاجی مظاہرہ،مظاہرہ کیوں کیا گیا؟ 148

کراچی میں جموں وکشمیر لبریشن فرنٹ کا احتجاجی مظاہرہ،مظاہرہ کیوں کیا گیا؟

کراچی ( چنارنیوز ) کراچی پریس کلب پر جموں کشمیر لبریشن فرنٹ و سٹوڈنٹس لبریشن فرنٹ سندھ (ڈویژن) کے زیر اہتمام مظاہرہ کیا گیا جس میں سینئر صحافی مجاہد بریلوی، جموں کشمیر نیشنل عوامی پارٹی ، پاکستان عوامی تحریک ، ن لیگ آزاد کشمیر کے کارکنان اور سول سوسائٹی نے شرکت کی۔ مظاہرے کا مقصدجموں کشمیر لبریشن فرنٹ کے چیئرمین یٰسین ملک کی پیبلک سیفٹی ایکٹ کے تحت گرفتاری ، بھارتی مقبوضہ کشمیر میں جموں کشمیر لبریشن فرنٹ کے مرکزی اور زونل قائدین کی گرفتاریوں اور اسیران تحریک آزادی جموں کشمیر اور کنٹرول لائن پر گولہ بھاری سے متاثر ہونے والوں کے ساتھ اظہار یکجہتی تھا۔ مظاہرین نے مختلف پلے کارڈ اور بینر اٹھا رکھے تھے جن پر بھارتی ظُلم و ستم کے خلاف اور یٰسین ملک کی رہائی کے لئے عبارات لکھی ہوئی تھیں۔ مقرررین نے کہا چیئرمین جموں کشمیر لبریشن فرنٹ یٰسین ملک کی جان کو خطرہ ہے مودی حکومت اپنے مذموم مُقاصد پورے کرنے کے لئے انھیں قتل کرنا چاہتی ہے اسی وجہ سے اُن کو سری نگر جیل سے جموں جیل میں بھیجا گیا ہے ۔

بھارت نے یٰسین ملک کی سفری دستاویزات ضبط کی ہوئی ہیں اور اُن کو علاج معالجے کے کی سہولیات بھی نہیں دے رہا جو کہ انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزی ہے۔ مودی حکومت بوکھلاہٹ کا شکار ہے اور بھارتی مقبوضہ کشمیر میں پُر امن جدوجہد کو سپوتاژ کر کے وہاں جنگ مسلط کرنا چاہتی ہے۔ مودی حکومت الیکشن جیتنے کے لئے وہاں دہشت گردی کو فروغ دے رہی ہے۔ جب تک یٰسین ملک کو رہا نہ کیا گیا تو یہ احتجاج چلتے رہیں گے اور ان کا دائرہ کار پوری دُنیا میں ہندوستانی سفارتخانوں تک پھیلے گا۔ اس پورے خطے کا امن و امان مسئلہ کشمیر سے جُڑا ہوا ہے جب تک یہ مسئلہ حل نہیں ہوتا امن کے خواب ادھورے ہی ہونگے۔ بھارت نہتے لوگوں کے قتل عام اور گرفتاریوں سے تحریک آزادی کشمیر کو دبانا چاہتا ہے۔ ہندوستان کی طرف سے جموں کشمیر لبریشن فرنٹ پر پابندی پر بات کرتے ہوئے کہا کہ جموں کشمیر لبریشن فرنٹ تحریک آزادی کشمیر کی نمائندہ اور ذمہ دار جماعت ہے۔ ہم اس پابندی کو مُسترد کرتے ہیں۔ ہندوستان ایک پُر امن جدوجہدکو عسکر یت کا راستہ دیکھا رہا ہے۔ ہم پُر امن طریقے سے اپنے حق کے لئے جدوجہد کر رہے ہیں

کسی صورت اس سے دستبردار نہیں ہونگے۔یہ وہ حق ہے جس کا وعدہ بھارت اور پاکستان نے نہ صرف کشمیریوں بلکہ عالمی برادری کے سامنے کیا تھا لیکن وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ اپنے کئے گئے وعدوں سے نہ صرف پھراگیا بلکہ کشمیر پر اپنے قبضے کو مزید مستحکم کیا جا رہا ہے۔ ایک پُر امن سیاسی جماعت پر پابندی لگانے سے ہندوستان کا نام نہاد جمہوری اور سیکولر چہرہ سامنے آچُکا ہے۔ آزادی ہمارا پیدائشی حق ہے دُنیا کی کوئی طاقت ہمیں اپنا حق لینے سے نہیں روک سکتی ۔بھارتی افواج نے ماورائے عدالت کشمیریوں کے قتل کو معمول بنا لیا ہے اور کنترول لائن پر آئے روز سویلین آبادی کو نشانہ بنایا جا رہا ہے اور اُن کی املاک کو تباہ کر رہا ہے۔ہم اس موقع پر کشمیری عالمی برادری اور انسانی حقوق کے محافظ اداروں سے مطالبہ کرتے ہیں کہ کشمیریوں پر ہونے والے مظالم کا نوٹس لیا جائے اور عالمی عدالت میںبھارت پر جنگی جرائم کے حوالے سے مقدمہ قائم کیا جائے۔ ریاست جموں کشمیر سے فوجوں کا انخلا یقینی بناتے ہوئے ریاستی عوام کو اپنے مُستقبل کا فیصلہ کرنے کا حق دیا جائے۔
ان خیالات کا اظہار جموں کشمیر لبریشن فرنٹ اور جموں کشمیر سٹوڈنٹس لبریشن فرنٹ سندھ دویژن کے زیر اہتمام کراچی پریس کلب پر ہونے والے مظاہرے میں مقررین نے خطاب کرتے ہوئے کیا۔مظاہرہ سے سینئر صحافی مجاہد بریلوی ، صدر جے کے ایل ایف سندھ ڈویژن کے ایم عبداللہ، جنرل سیکرٹری وحید حیات ممبر سپریم کونسل سردار جاوید حنیف، نائب صدر نیشنل زون راشد عظیم ، ایس ایل ایف سندھ کے صدر ہمایوں مظفر الیاس مغل ، زرین ایڈوکیٹ ، افضل بٹ اور دیگر نے خطاب کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں